کمیاب بیماریوں سے متعلق قومی پالیسی برائے 2021 کے بارے میں وضاحت

Image default
Urdu News

نئی دلّی: یہ بات بعض  اخبارات میں شائع ہونے والی ان خبروں کے تناظر میں  ہے، جن میں کہا گیا ہے کہ حکومت کی اسکیم آیوشمان بھارت کے تحت اب  کمیاب بیماریوں سے متاثرہ  افراد کا بھی  علاج ہوگا۔ اس تناظر میں  یہ وضاحت کی جاتی ہے کہ حال ہی میں  کمیاب بیماریوں کے تعلق سے ، جس قومی پالیسی  کا اعلان ہوا ہے، اس میں  علاج کے لئے  پرچم بردار اسکیم  راشٹریہ آروگیہ ندھی کے تحت  20  لاکھ روپے تک کی  مالی  معاونت کا  التزام ہے۔ اس میں  وہ بیماریاں شامل ہیں ، جن کا  ایک ہی وقت میں علاج  ہو سکتا ہے۔ (کمیاب بیماری پالیسی کے گروپ  ایک کے تحت  ان بیماریوں کو  فہرست بند کیا گیا ہے)۔ اس طرح  مستفیدین کو  مالی معاونت  بی پی ایل خاندانوں تک ہی محدود نہ ہوگی  بلکہ  اس کا فائدہ  آبادی کے  40  فیصد سے  زیادہ  لوگوں تک  پہنچا یا جائے گا۔ شرط یہ ہے کہ ایسے لوگ آیوشمان بھارت  پردھان منتری جن آروگیہ یوجنا  (پی ایم جے اے وائی)  کے تحت  اہل ہوں۔ ایسے  مریضوں کی مالی  معاونت کا  التزام  آیوشمان بھارت   پی ایم جے اے وائی  کے تحت  نہیں بلکہ  اس کی  پرچم بردار اسکیم  راشٹریہ آروگیہ ندھی (آر  اے این)  کے تحت ہے۔

اس کے علاوہ  اس کمیاب بیماریوں کے  علاج سے متعلق پالیسی کے تحت  ایک  عوامی  امداد  کا  میکنزم  بھی  تیار کیا جانا ہے، تاکہ  کارپوریٹ اداروں اور  انفرادی  طور پر  لوگوں کو  آئی ٹی پلیٹ فارم  کے ذریعے  کمیاب بیماریوں کے علاج کے لئے  مالی  امداد  کے حوالے سے  حوصلہ افزائی  کی جاسکے۔ اس حوالے سے  جو فنڈ  جمع ہوگا  اس کے ذریعے  نہ صرف  تین  زمروں  میں شامل کمیاب بیماریوں کے علا ج کے لئے  امداد  فراہم کی جائے گی، بلکہ  جو  باقی مالی  وسائل ہوں گے ان کا استعمال تحقیق کے لئے بھی  کیا جائے گا۔

Related posts

وزیراعظم نے افسانوی بنگالی اداکار سمترا چٹرجی کے انتقال پر تعزیت کا اظہار کیا ہے

امریکی شہری کو لیہہ سے ہندوستانی فضائیہ کے ہیلی کاپٹر نے بچایا

آئی آئی ٹی کھڑگ پور کے 64 ویں جلسۂ تقسیم اسناد سے صدر جمہوریہ رام ناتھ کووند کا خطاب