ترقی یافتہ ممالک کو اپنے تاریخی تجربات کے ساتھ، خالص صفر اور کم کاربن کی صنعت کی طرف عالمی منتقلی میں قیادت کرنی چاہیے: جناب بھوپیندر یادو

Urdu News

ہندوستان اور سویڈن نے آج اسٹاک ہوم میں انڈسٹری ٹرانزیشن ڈائیلاگ کی میزبانی کی۔ ان کی مشترکہ پہل یعنی لیڈرشپ فار انڈسٹری ٹرانزیشن (لیڈ آئی ٹی) کے ایک حصے کے طور پر لیڈ آئی ٹی ( LeadIT )اقدام ان شعبوں پر خاص توجہ مرکوز کرتے ہیں جو عالمی ماحولیاتی کارروائی میں کلیدی اسٹیک ہولڈرز ہیں اور جن کے لیے مخصوص مداخلت کی ضرورت ہوتی ہے۔

اس اعلیٰ سطحی مکالمے نے اقوام متحدہ کی کانفرنس ’اسٹاک ہوم+50‘ میں اہم کردار ادا کیا ہے: سب کی خوشحالی کے لیے ایک صحت مند سیارہ – ہماری ذمہ داری، ہمارا موقع’، جو 2 اور 3 جون 2022 کو ہو رہی ہے اور 27 کوپ  کا ایجنڈا ترتیب دیا ہے۔

تقریب کا آغاز ماحولیات، جنگلات اور موسمیاتی تبدیلی، ہندوستان،کے مرکزی وزیر، جناب بھوپیندر یادو اور وزیر برائے موسمیات اور ماحولیات، سویڈن، محترمہ انیکا اسٹرینڈہل کے خطاب سے ہوا۔

افتتاحی خطاب میں مرکزی وزیر نے 1972 میں منعقد ہونے والی ’انسانی ماحولیات‘ پر اقوام متحدہ کی پہلی کانفرنس اور ماحولیاتی مسائل کو بین الاقوامی خدشات میں سب سے آگے رکھنے اور 50 ویں سالانہ کانفرنس کے انعقاد کے لیے دنیا کو مبارکباد دی۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ یہ وقت ہے کہ باہمی تعاون کے 50 سال مکمل ہونے کا جشن منایا جائے، ساتھ ہی ساتھ اس بات کا بھی جائزہ لیا جائے کہ کیا حاصل کیا گیا ہے اور ابھی مزید کیا حاصل کیا جانا ہے۔ وزیر  موصوف نے کہا ” ترقی پذیر دنیا کو صرف ایک صنعتی ‘منتقلی’ کی نہیں بلکہ ایک صنعتی نشاۃ ثانیہ کی ضرورت ہے – ایسی صنعتوں کا پھول جو صاف ستھرے ماحول کے ساتھ روزگار اور خوشحالی پیدا کرے۔ ترقی یافتہ قوموں کو، اپنے تاریخی تجربات کے ساتھ، خالص-صفر اور کم کاربن صنعت کی طرف عالمی منتقلی میں قیادت کرنی چاہیے۔”

جاپان اور جنوبی افریقہ، ‘پہل’ کے تازہ ترین ارکان کا خیرمقدم کیا گیا۔اس سےلیڈآئی ٹی ( LeadIT )کی کل رکنیت بشمول ممالک اور کمپنیاں ایک ساتھ 37 تک بڑھ گئی ہے ۔ وزیر موصوف  نےسامعین کو اس اقدام کے تحت ہونے والی پیشرفت کے بارے میں بھی آگاہ کیا جس میں علم کے تبادلے اور مشترکہ کوششوں کی سہولت کے لیے سیکٹرل روڈ میپنگ، ورکشاپس اور صنعتی فیلڈ کے دورے شامل ہیں۔

تقریب کے دوران، بھارت نے 2022.23  ترجیحات کے نفاذ کے لیے گول میز مذاکرات کی صدارت کی۔ آب و ہوا کی کارروائی میں رفتار اور پیمانے کی ضرورت پر تمام مقررین کی آواز یکساں طور پر گونجی۔ ممالک اور کمپنیوں نے اپنے اقدامات، کامیابی کی کہانیاں اور مستقبل کے منصوبوں کا اشتراک کیا۔ شرکاء کی طرف سے کچھ خاص اور قیمتی بصیرتیں شیئر کی گئیں۔ یہ محسوس کیا گیا کہ اگر گھریلو اقدامات کو نافذ کیا جائے اور اچھی طرح سے بات چیت کی جائے تو بین الاقوامی سطح پر قابل قدر تحریک ہوسکتی ہے۔ ایسے پلیٹ فارمز کے ذریعے کی جانے والی کوششیں اور تبادلے دنیا کو درست سمت میں لے جانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ وعدوں اور وعدوں کو اب تخفیف اور موافقت میں عمل میں لانا چاہیے جو کہ موسمیاتی مالیات اور ٹیکنالوجی کی منتقلی پر منحصر ہے۔

Related posts

مرکزی کابینہ نے ہندستان اور میاں ما کے درمیان زمینی سرحدی کراسنگ کے سمجھوتے کی منظوری دی ہے

ڈاکٹر جیتندر سنگھ نے ’’جوہری توانائی –صاف ستھری اور بیس لوڈ انرجی کی سمت میں‘‘ کے موضوع پر دسویں جوہری توانائی کنکلیو کا افتتاح کیا

پرائیویٹ شعبے میں خواتین کے لئے کام کی جگہ کو محفوظ بنانے کے تئیں ایک بڑا قدم